Monday, 20 November 2017

کتنا وقت باقی ہے --- kitna waqt baaqi hai



مرے ہمدم! بتا مجھ کو
کہ کتنا وقت باقی ہے؟

ابھی کچھ بھی نہیں لکھا
وہ سب باتیں جو میں نے سرد راتوں 
اور تپتی سخت دوپہروں میں 
تیرے واسطے سوچی ہیں 
اُن سے شعر بُننے ہیں
ابھی تو لفظ چننے ہیں
ابھی تو چائے کے اک کپ پہ 
تجھ کو کتنی ہی نظمیں سُنانی ہیں 
بڑی باتیں بتانی ہیں 
بڑی یادیں بِتانی ہیں 
مرے بے معتبر شعروں نے
تیرے لب کو چھو کر
اک نئی توقیر پانی ہے
ابھی تو قافیے کھوجوں گا
تشبیہات باندھوں گا
ابھی تو فیض سے دل
جون سے درد
انشاء جی سے گیت مانگوں گا
مجھے لکھنے کی مہلت دے
ابھی تخلیق کا اک مرحلۂ سخت باقی ہے
میرے ہمدم! 
ہماری عمرِ رفتہ میں
بتا مجھ کو کہ 
کتنا وقت باقی ہے؟


ابھی تُو قید میں ہے
تیری سانسوں پر
زمانے کے، رویوں کے، رواجوں کے
بڑے ہی سخت پہرے ہیں
گزرتا وقت، ہر موسم
تری لڑنے کی قوت سلب کرتا ہے
مرے ہمدم 
تُو ہنسنے کی اجازت طلب کرتا ہے
جہاں تو پاؤں دھرتا ہے
وہیں پر تیری عزت کا کوئی خود غرض ٹھیکیدار 
یوں آواز کرتا ہے 
خبر ہو
راستہ تیرا مقرر ہے
مقدر ہے
مرے ہمدم 
تجھے دہلیز سے آزاد ہونا ہے 
تری عزت کو تیری اپنی راہوں میں کہِیں 
آباد ہونا ہے
ترے ان مرمریں ہاتھوں کی
الجھی سی لکیروں کو
سلجھنا ہے 
کہ ان میں تیرے حصے کا
دمکتا بخت باقی ہے
مرے ہمدم 
بتا مجھ کو
تھکن کے اس سفر میں اور
کتنا وقت باقی ہے؟


ابھی تو سہم کے تُو مسکراتا ہے
کوئی وعدہ اگر کرتا  ہے تو شاید
مگر، چونکہ، چنانچہ ساتھ رہتے ہیں
تری آنکھیں جو کائنات جیسی ہیں
مری ان عام سے نظروں کو چھو کر
کانپ اُٹھتی ہیں
ترے لہجے میں اُلفت اور اندیشے
برابر، ساتھ چلتے ہیں
تری چشمِ غزالاں کو ابھی
بےباک ہونا ہے
تجھے اندیشۂ سود و زیاں سے پاک ہونا ہے
ترے اندر چھپے اس عشق کو
بیدار ہونا ہے
مرے درویش 
تجھ کو آخرش خوددار ہونا ہے
ترے بیدار ہونے تک
ترے خوددار ہونے تک
مجھے اس انتظارِ سحر سے دوچار رہنا ہے
ملیں گے جب تُو آئے گا
پرانے شہر کی گلیوں میں گھومیں گے
وہی گلیاں جہاں کی کھڑکیوں میں
تیرے جیسے کتنے ہی معصوم پنچھی
اڑنے کی حسرت میں جیتے ہیں
دل و جان و خیال و خواب میں
کوئی نہ جن کے ، ربط باقی ہے
اگر باقی ہے کچھ تو ضبط باقی ہے
میرے ہمدم 
بتا مجھ کو 
رہائی میں تری اب اور
کتنا وقت باقی ہے؟

---------------------------------------------------------------------------------

merey humdam! bata mujh ko ke
kitna waqt baaqi hai?

abhi kuch bhi nahi likha
woh sab baatein 
jo main ney sard raatoN
aur tapti, sakht dopehroN mein
terey waastey sochi hain
unn sey shair bun'ney hain
abhi tou lafz chun'ney hain
abhi tou chaaye ke ik cup pe
tujh ko kitni hee nazmain sunaani hain
bari baatein bataani hain
bari yaadein bitaani hain
merey bey-mo'tabir shairoN ney
terey lab ko chhu ker
ik nayi tauqeer paani hai
abhi tou qaafiye khhojooN ga
tashbeehaat baandhooN ga
abhi tou Faiz sey dil
Jaun sey dard
Insha jee sey geet maangooN ga
mujhey likhney ki mohlat dey
abhi takhleeq ka ik marhala e sakht baaqi hai
merey humdam! 
humaari umr e rafta mein
bata mujh ko ke
kitna waqt baaqi hai?


abhi tu qayd mein hai
teri saansoN per
zamanay ke, rawaiyyoN ke, riwaajoN ke
barey hee sakht pehrey hein
guzarta waqt, har mausam
teri larney ki quwwat salb kerta hai
merey humdam!
tu hansney ki ijaazar talab kerta hai
jahaN tu paaon dharta hai
waheen pe teri izzat ka koi khudgharz thekedaar 
yuuN aawaz kerta hai
khabar ho!
raasta tera muqarrar hai
muqaddar hai
merey humdam!
tujhey dehleez sey aazad hona hai
teri izzat ko teri apni raahoN mein kahiN 
aabaad hona hai
terey inn marmareeN haathoN ki 
uljhi si lakeeroN ko
sulajhna hai
ke inn mein terey hissay ka
damakta bakht baaqi hai
merey humdam!
bata mujh ko
thakan ke iss safar mein aur
kitna waqt baaqi hai?


abhi tou sehem ke tuu muskurata hai
koi waada agr kerta tou shayed
magar, choonke, chunaanche saath rehtey hain
teri aankhain, jo kaainaat jaisi hain
merey in aam si nazroN ko chhu ker
kaanp uthti hain
terey lehjay mein ulfat aur andeshey
baraabar, saath chaltey hain
teri chashm e ghazaalaN ko abhi
beybaak hona hai
tujhey andesha e sood o ziyaaN sey paak hona hai
terey andar chhupay iss ishq ko 
beydaar hona hai
merey derwaish
tujh ko aakhirash khud'daar hona hai
terey bedaar hone tak
terey khud'daar hone tak
mujhey iss intezaar e sahar sey dochaar rehna hai
milain gey, jab tuu aaye ga
puraaney sheher ki galiyoN mein ghoomain gey
wohi galiyan jahaan ki khirkiyoN mein
terey jaisey kitney hee masoom panchhi
urney ki hasrat mein jeetey hain
dil o jaan o khayaal o khwaab mein
jin ke na koi rabt baaqi hai
agr baaqi hai kuch tou zabt baaqi hai
merey humdam!
bata mujh ko
rihaayi mein teri ab aur
kitna waqt baaqi hai?

Tuesday, 18 July 2017

Mohtaat Mohabbat - محتاط محبت

عشق پابندِ حدِ عقل و فہم کیسے ہو؟
دل کے دربار میں کوئی منطق اہم کیسے ہو؟
وہ جو ایماں ہے مرا، میرا وہم کیسے ہو؟
عشق کو عقل پہ آ جائے رحم، کیسے ہو؟

مصلحت کا یہ سزاوار نہیں ہے، سن لے
اور کچھ ہوگا تجھے پیار نہیں ہے، سن لے
تجھ کو دنیا سے جو انکار نہیں ہے، سن لے
تو ہے بزدل تو میرا یار نہیں ہے، سن لے


تجھ کو دنیا کی ہیں رسومات مطلوب، نہ مانگ
مجھ سے ڈرنے کا، سہم جانے کا اسلوب نہ مانگ
ایسی الفت کو سمجھتا ہوں بہت خوب، نہ مانگ
مجھ سے محتاط محبت میرے محبوب نہ مانگ

_______________________________________________


ishq paband e hadd e aql o fehem kaisey ho?
dil ke darbaar mein koi mantaq ehem kaisey ho?
woh jo eemaaN hai mera, mera vehem kaisey ho?
ishq ko aql pe aa jaaye rehem, kaisey ho?


maslehat ka yeh sazawaar nahi hai, sunn ley
aur kuch hoga, tujhey pyaar nahi hai, sunn ley
tujh ko duniya sey jo inkaar nahi hai, sunn ley
tu hai buzdil tou mera yaar nahi hai, sunn ley

tujh ko duniya ki rasoomaat hain matloob, na maang
mujh sey derney ka, sehem jaanay ka asloob na maanga
aisi ulfat ko samajhta hoon bohat khoob, na maang
mujh sey mohtaat mohabbat merey mehboob na maang



Mohtaat ~ Careful
Fehem ~ Understanding
Mantaq ~ Logic
Matloob ~ Needed
Asloob ~ Style, Way

Sunday, 23 April 2017

hayaati da roza



تُوں حیاتی دا میری روزہ ایں
موت، افطار ورگی اے مینوں
ساڈی روحاں نے وکھھ نئیں ہونا
سانوں قبراں دے وِچ ٹھنڈ پہنچُو

روہی دے وچّوں وِچ وسّدے ہوئے
توں کسے پِنڈ دا ایں مِٹھا کھُوہ
میں تیرے کنڈے تے کھڑا پِپّل
میریاں شاخاں دا لہو ایں تو

تُوں ایں بدلاں دے دیس دی رانی
نچدی کنیاں دا تکدی ایں جادُو
سُن کدی میری جھوک دے دُکھڑے
سُکے ستلج دے وچوں ہُوک اُٹھُو

ساڈی تسبیح اے صِرف ساہواں دی
ساڈے سینے دی واج، اللہ ھُو
عشق نوں جھلیا فتوے نئیں لگدے
عشق ہے اکھ دے پانی نال وضو

جا کے پردیس، کلّا رووِیں نہ
غیر مِٹّی تے ڈولِیں نہ ہنجو
میرے ورگا تے خورے لبھ جاووے
میرے ورگی پریت کون کرُو

تُوں حیاتی دا میری روزہ ایں


----------------------------------------------------------------------------------------------------------------------


tuuN hayaati da meri roza aeyn
maut aftaar wargi aey mainu
saadi roohaaN ney vakhh nai hona
saanu qabraaN dey vich thhand pohanchu

Rohi dey vichoN vich wasdey hoye
tuuN kisey pindd da aeyn mithha khhu
main terey kanday tey khhara pippal
meriyaaN shaakhaN da lahu aeyn tu

tu aeyn badlaaN dey des di raani
nachdi kanniyaN da takdi aeyn jaadu
sunn kadi meri jhhok dey dukhhrey
sukkay Satluj dey vichoN huuk uthhu

saadi tasbeeh aey sirf saahwaN di
saaday seeney di waaj Allah Hu
ishq nu jhalleya fatway nai lagday
ishq hai akhh dey paani naal wuzu

jaa ke pardes kalla roweeN naa
ghair mitti tey douleeN na hanju
merey warga tey khawrey labhh jaavey
merey wargi pareet kaun karu



tu hayaati da meri roza aeyn



Sunday, 17 April 2016

Aashiq hoon bhikaari hoon


گوری تو نے ٹھیک ہے جانا، عاشق ہوں بھکاری ہوں
مجھ کو لوٹ کے پھر ہے آنا، عاشق ہوں بھکاری ہوں

ٹھوکر، گالی، طعنے،دھکے مجھ کو عام سی باتیں ہیں
لب پہ شکوہ کاہے لانا، عاشق ہوں بھکاری ہوں

برسوں سے ہے غم سے یاری، درد سے رشتہ جنموں کا
چوٹ لگی تو مرہم مانا، عاشق ہوں بھکاری ہوں

بھیک ملے جو پریت کی تیری، ٹکڑے تیری یادوں کے
ہو گیا میرا پانی دانہ، عاشق ہوں بھکاری ہوں

عشق فقیری لاج کی دشمن، خودی سے اس کو بَیر رہے
پگڑی اُچھلی تو پہچانا، عاشق ہوں بھکاری ہوں

اپنی دید کے سِکّوں سے بھر آنکھوں کے کشکول ذرا
میں نے مانگا کون خزانہ، عاشق ہوں بھکاری ہوں

منگتے کی آواز تو جیسے کان اُترتی برچھی ہو
مجھ سے بحث تم مت فرمانا، عاشق ہوں بھکاری ہوں

پَیر کا کانٹا، راہ کا پتھر تھا میں پر اے جانِ وفا
کیسا کمتر تو نے جانا ---- عاشق ہوں بھکاری ہوں


____________________________________________________


gori tu ney theek hai jaana, aashiq hoon bhikaari hoon
mujh ko laut ke phir hai aana, aashiq hoon bhikaari hoon

thhokar, gaali, taa'nay, dhakkey, mujh ko aam si baatain hain
lab pe shikwa kaahey laana, aashiq hoon bhikaari hoon

barsoN sey hai gham sey yaari, dard sey rishta janmoN ka
chout lagi tou marham maana, aashiq hoon bhikaari hoon

bheek miley jo preet ki teri, tukray teri yaadoN ke
hogya mera paani daana, aashiq hoon bhikaari hoon

ishq fakeeri laaj ki dushman, khudi sey isko beyr rahey
pagri uchhli tou pehchaana, aashiq hoon bhikaari hoon

apni deed ke sikkoN sey bhar aankhoN ke kashkol zara
main ney maanga kon khazaana, aashiq hoon bhikaari hoon

mangtay ki aawaz tou jaisey kaan utarti barchhi ho
mujh sey behes tum matt farmana, aashiq hoon bhikaari hoon

raah ka pathhar, paer ka kaanta, tha main par aey jaan e wafa
kaisa kamtar tu ney jaana ---- aashiq hoon bhikaari hoon

Sunday, 9 August 2015

Aadha Shayer ----- آدھا شاعر

میں شاعر ہوں
میں اس دنیا پہ، اس کے باسیوں پہ
مہ جبینوں پہ
اداؤں پہ، جفاؤں پہ
غموں، خوشیوں پہ
جملہ حسرتوں پہ
لکھتا رہتا ہوں
مگر اے حسن ناممکن
میں تجھ پہ لکھ نہیں سکتا
میں شاعر ہوں
مگر میں آدھا شاعر ہوں
لکھوں کیسے کہ تیرے حسن اور میرے بیاں کے درمیاں
حائل خلیجیں ہیں
سمندر ہیں
تجھے تشبیہ کس سے دوں
تیرے چہرے کو مثلِ گل
تیرے عارض کو مرمر یا
تیری زلفوں کو بادل کس طرح کہ دوں
کہ یہ سب موسموں کی قید میں جکڑے مناظر ہیں
اے میرے حسنِ ناممکن
مجھے یہ سب نظارے، استعارے
اس مقامِ عشق کی توہین لگتے ہیں
جو میرے دل میں ہے اور
جس پہ تو مسند نشیں ہے




بہت شاعر، بہت سے داستاں گو ہیں
جو تجھ کو ایک مضموں کی طرح
نظموں میں، افسانوں میں ڈھالیں گے
یہ ناداں جانتے کب ہیں
کہ تیرا حسن لفظوں اور غزلوں میں
کبھی بھی دِکھ نہیں سکتا
محبت کا تقاضہ ہے
میں تجھ پہ لکھ نہیں سکتا
مکمل شاعروں کے جمگھٹے میں
میں تیرا آدھا شاعر ہوں
جو تجھ پہ لکھ نہیں سکتا


----------------------------------------------------------------------------------------------------







main shayer hoon

main iss duniya pe, iske baasiyo'n pe

mah-jabeeno'n pe

adaao'n pe, jafaao'n pe
ghamo'n khushiyo'n pe
jumla hasrato'n pe
likhta rehta hoon
magar aey husn e na-mumkin!
main tujh pe likh nahin sakta
main shayer hoon
magar main aadha shayer hoon
likhoon kaisey ke terey husn aur merey baya'n ke dermeya'n 
haail khaleejain hain
samandar hain

tujhey tashbeeh kis sey doon?
terey chehrey ko misl e gul
terey aariz ko marmar yaa
teri zulfo'n ko baadal kis tarah keh doon?
ke yeh sab mausamo'n ki qaed mein jakray manazir hain
aey merey husn e na-mumkin!
mujhey ye sab nazaarey, istaa'rey
uss maqaam e ishq ki touheen lagtey hain
jo merey dil mein hai aur jis pe tu masnad nashee'n hai

bohat shayer, bohat sey daasta'n-go hain
jo tujh ko aik mazmoo'n ki tarah
nazmo'n mein, afsaano'n mein dhaalain gey
yeh naada'n jaantey kab hain
ke tera husn lafzo'n aur ghazlo'n mein
kabhi bhi dikhh nahi sakta
mohabbat ka taqaaza hai
main tujh pe likh nahi sakta
mukammal shaayeron ke jamghatey mein
main tera aadha shaayer hoon
jo tujh pe likh nahi sakta....